Sadaat DawaKhana

Hakeem Syed Izhar-ul-Haq Tirmizi

Liver Cirrhosis

جگر کی سختی یا سکڑنا

جگر کی سختی یا سکڑ جانے کو سیروسس آف لیور کہتے ہیں، یہ مرض بہت آہستہ پیدا ہوتا اور بڑھتا ہے، جب تک اس کی تشخیص ہوتی ہے یہ آخری سٹیج پر پہنچ چکا ہوتا ہے

وجوہات
جگر میں صفرا کی نالی میں رکاوٹ کی وجہ سے صفرا کا جگر میں جمع ہو جانا جگر کی سختی پیدا کرتا ہے، ہیپاٹائٹس بی اور سی کا وائرس بھی فوراً یا کچھ عرصے بعد جگر کی سختی کا باعث بن سکتا ہے، الکحل کے زہریلے اثرات جگر پر اثر انداز ہو کر اسے سخت کرتے ہیں، کئی ادویات کے سائیڈ ایفیکٹس سے بھی یہ مسئلہ پیدا ہو سکتا ہے، مرغن غذاؤں سے جگر میں سوزش ہوتی ہے اور مسلسل سوزش جگر کو سخت کر دیتی ہے، جگر میں آئرن یا کاپر کا جمع ہونا بھی اسے سخت کرتا ہے

ابتدائی علامات
وزن کم ہونا، سست اور لاغر ہونا، اکثر بخار رہنا، جگر کے مقام پر درد رہنا، بھوک میں کمی، تھکاوٹ، تلی کا بڑھ جانا، جگر کا سائز بڑھ جانا اور پھر سکڑنا

شدید علامات
بدہضمی، قبض، گیس، پیٹ میں پانی جمع ہونا، جگر کی وریدوں میں بلند فشار خون، خون کی قے، خشک جلد، جسم کا رنگ زردی مائل، مردانہ کمزوری، ماہواری کی بندش، خونی بواسیر وغیره

احتیاط اور پرہیز
مناسب آرام کریں، نمک کم سے کم استعمال کریں، مرچ مصالحے، مرغن غذائیں اور گوشت کا استعمال ترک کر دیں، کھانے میں سبزیاں، پھل اور تازہ جوس زیادہ سے زیادہ استعمال کریں، کھلے اور ہوادار کمرے میں رہیں، ڈپریشن اور ٹینشن سے دور رہیں، انڈا اور مچھلی سے پرہیز کریں، صاف پانی پیئیں اور ادویات ہمیشہ اپنے معالج کے مشورے اور ہدایات کے مطابق استعمال کریں

امراضِ معده و جگر اور ہیپاٹائٹس کے علاج اور پاکستان میں کہیں بھی ہماری ادویات حاصل کرنے کے لئے ہمارے فون نمبر پر رابطہ کیجئے