ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﮈﮬﺎﻧﭽﮧ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﮨﻮﺗﺎ ہے، ﺍﻥ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺟﻮﮌﻭﮞ ﮐﻮ ﻃﻮﯾﻞ ﻋﺮﺻﮯ ﺗﮏ ﺗﺤﻔﻆ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ، ﻭﭨﺎﻣﻦ ﮈﯼ، ﭘﻮﭨﺎﺷﯿﻢ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﻔﯿﺪ ﻃﺎﻗﺘﻮﺭ ﻏﺬﺍﺋﯿﮟ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﮯ ﻃﺮﺯ ﻋﻤﻞ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ آپ کی ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﺻﺤﺖ ﻣﻨﺪ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﮨﻢ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺍﺩﺍ کرتا ہے، یعنی آپ کو کچھ ایسی غذاؤں سے بچنے کی ضرورت ہے ﺟﻮ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺟﻮﮌﻭﮞ ﮐﻮ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﭘﮩﻨﭽﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﯿﮟ، یہ غذائیں ﺣﺪﺕ ﯾﺎ ﺳﻮﺯﺵ ﭘﯿﺪﺍ کرتے ہوئے ﮨﮉﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﯿﻠﺸﺌﯿﻢ ﻧﮑﺎﻟﺘﯽ یا ﮐﯿﻠﺸﺌﯿﻢ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺬﺍﺏ ﺭﻭﮐﺘﯽ ﮨﯿﮟ

ﭘﺮوسیسڈ فوڈ
پروسیسڈ ﻓﻮﮈ ﻣﯿﮟ ﺻﺤﺖ ﮐﻮ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﭘﮩﻨﭽﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﻣﺎﺩﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، جن میں ﭨﺮﺍﻧﺲ ﻓﯿﭩﺲ، ﺭﯾﻔﺎﺋﻨﮉ ﮐﺎﺭﺑﺰ، ﺳﻮﮈﯾﻢ ﺍﻭﺭ ﭼﯿﻨﯽ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺍﮨﻢ ﮨﯿﮟ، ﻋﺎﻡ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ان کے ﻧﻘﺼﺎﻧﺎﺕ ﮐﺎ ﻋﻠﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺍﻭﺭ اس کا ﺳﺒﺐ ﺍﻥ ﻏﺬﺍﺅﮞ ﮐﯽ ﻟﺬﺕ ﺍﻭﺭ ﺫﺍﺋﻘﮧ ﮨﮯ جس ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻟﻮﮒ انہیں شوق سے کھاتے ہیں، ﯾﻮﮞ ﺗﻮ ﭘﺮﻭﺳﯿﺲ ﻏﺬﺍﺋﯿﮟ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﺣﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﭼﮭﯽ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﮍﯼ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﻮ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻻﺯﻣﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﭘﺮﮨﯿﺰ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﻧﮑﮯ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﺩﮦ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺟﻮﮌﻭﮞ ﭘﺮ شدت سے اثر انداز ہوتے ہیں

ﭨﺮﺍﻧﺲ ﻓﯿﭩﺲ ﯾﻌﻨﯽ ﮨﺎﺋﯿﮉﺭﻭﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﭼﮑﻨﺎﺋﯿﺎﮞ ﻣﺜﻼً ﺑﻨﺎﺳﭙﺘﯽ ﮔﮭﯽ، ﭘﺮوسیس ﮐﺌﮯ ﮔﺌﮯ ﮐﺎﺭﺑﻮﮨﺎﺋﯿﮉﺭﯾﭩﺲ ﺍﻭﺭ ﭼﯿﻨﯽ ﯾﮧ ﺳﺒﮭﯽ آپ کے ﺟﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﺣﺪﺕ ﮐﺎ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﯿﮟ، ﭘﭽﯿﺲ ﺳﮯ ﭼﻮﻧﺘﯿﺲ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺟﻮﮌﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﮐﮍﻥ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﺩ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﻧﮯ لگتا ہے ﺍﻭﺭ ﻧﻘﻞ ﻭ ﺣﺮﮐﺖ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﻮ ﮐﺮ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ، ﺁﮔﮯ ﺟﺎ ﮐﺮ ﯾﮧ ﺣﺪﺕ ﺟﻮﮌﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺮﮐﺮﯼ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﺒﺎﮦ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ، ﺣﺪﺕ ﺳﮯ ﻭﺭﻡ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﺭﻡ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﮑﺴﺖ ﻭ ﺭﯾﺨﺖ ﮐﻮ ﺗﯿﺰ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﮍﯼ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﻃﺒﻌﯽ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﮐﻮ ﺷﺪﯾﺪ ﺗﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﺑﻨﺘﺎ ہے

ﭼﯿﻨﯽ
ﻋﺎﻡ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﭼﯿﻨﯽ ﺧﺎﺹ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺧﺴﺘﮕﯽ ﮐﺎ ﺧﻄﺮﮦ ﺑﮍﮬﺎﺗﯽ ﮨﮯ، ﯾﮧ ﻣﻌﺪﻧﯽ ﺍﺟﺰﺍﺀ ﻣﺜﻼً ﮐﯿﻠﺸﯿﻢ ﺍﻭﺭ ﻓﺎﺳﻔﻮﺭﺱ ﮐﮯ ﺗﻮﺍﺯﻥ ﭘﺮ ﻣﻨﻔﯽ ﺍﺛﺮ ﮈﺍﻟﺘﯽ ﮨﮯ، ﺟﺒﮑﮧ ﯾﮧ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻣﻌﺪﻧﯽ ﺍﺟﺰﺍﺀ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﺻﺤﺖ ﻣﻨﺪ ﺭﮐﮭﻨﮯ کے لئے ﺿﺮﻭﺭﯼ ہیں، ﭼﯿﻨﯽ ﮐﻮ ﺟﺰﻭ ﺑﺪﻥ ﺑﻨﻨﮯ کے لئے ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ، ﺟﺐ ﺟﺴﻢ ﮐﻮ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻏﺬﺍﺅﮞ ﺳﮯ ﺍﺿﺎﻓﯽ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﯽ ﺗﻮ ﻭﮦ ﭼﯿﻨﯽ ﮐﮯ ﺍﻧﺠﺬﺍﺏ ﮐﮯ لئے ﺩﺭﮐﺎﺭ ﮐﯿﻠﺸﺌﯿﻢ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﮭﯿﻨﭻ لیتی ہے، ﺍﺳﯽ وجہ سے ﮨﮉﯾﺎﮞ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ، ﭘﮭﻠﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﮈﯾﺮﯼ ﻣﺼﻨﻮﻋﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻗﺪﺭﺗﯽ ﺷﮑﺮ ﻣﻔﯿﺪ ﺍﻭﺭ ﺻﺤﺖ ﺑﺨﺶ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ

ﻧﻤﮏ
ﺍﺿﺎﻓﯽ ﺳﻮﮈﯾﻢ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮐﮯ ﺍﺧﺮﺍﺝ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﺑﻨﺘﺎ ہے، جس کے ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮐﯽ ﺩﺳﺘﯿﺎﺑﯽ ﺧﻄﺮﻧﺎﮎ ﺣﺪ ﺗﮏ ﮐﻢ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ، ﺳﻮﮈﯾﻢ ﺟﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﺭﻭﮎ ﺳﮑﺘﺎ ہے ﺍﻭﺭ ﻭﺭﻡ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺟﻮﮌﻭﮞ ﭘﺮ ﺩﺑﺎﺅ ﺑﮍﮬﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ، ﻣﯿﻨﻮﻓﯿﮑﭽﺮﺭﺯ ﻏﺬﺍﺅﮞ ﮐﻮ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﺍﻭﺭ ان کا ﺫﺍﺋﻘﮧ ﺑﮩﺘﺮ ﺑﻨﺎﻧﮯ کے لئے ﺳﻮﮈﯾﻢ ﮐﯽ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺎﺩﮮ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، پروسیسڈ ﻓﻮﮈ ﺍﻭﺭ ﺗﯿﺎﺭ ﺷﺪﮦ ﻏﺬﺍﺋﯿﮟ ﻣﺜﻼً ﮈﺑﮧ ﺑﻨﺪ ﺳﺒﺰﯾﺎﮞ، ﺳﻮﭘﺲ، ﮔﻮﺷﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺠﻤﺪ ﻏﺬﺍﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﮈﯾﻢ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ستر فیصد تک بھی ہو سکتی ہے

ﮐﯿﻔﯿﻦ
ﮐﯿﻔﯿﻦ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﺑﻨﺘﯽ ہے، ﮨﮉﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﻧﮑﺎﻟﻨﮯ ﮐﺎ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﺑﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮐﮯ ﺍﻧﺠﺬﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﺎﻭﭦ پیدا کرتی ہے، ﺑﮍﯼ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ کے لئے ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﺎﻓﯽ ﺍﮨﻢ ﮨﮯ کیونکہ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺩﺭﮐﺎﺭ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ، ﮐﯿﻔﯿﻦ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮐﮭﯿﻨﭻ ﻟﯿﺘﯽ ﮨﮯ، ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﭼﺎﺋﮯ ﯾﺎ ﮐﺎﻓﯽ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﯿﻔﯿﻦ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﻋﺎﺩﯼ ﮨﯿﮟ ان کی ﺭﯾﮍﮪ ﮐﯽ ﮨﮉﯼ ﮐﺎ ﺳﺘﻮﻥ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ہے

ﻣﯿﭩﮭﮯ ﻣﺸﺮﻭﺑﺎﺕ
ﻣﯿﭩﮭﮯ ﻣﺸﺮﻭﺑﺎﺕ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺟﻮﮌﻭﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﺩﮦ ﮨﻮﺗﮯ ہیں، یہ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮑﺎ ﺣﺠﻢ ﮐﻢ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺣﺪﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺳﻮﮈﺍ ﻣﺸﺮﻭﺑﺎﺕ ﭘﯿﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻟﻮﮒ ﺧﺎﺹ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮐﯽ ﮐﻤﯽ کے مرض میں مبتلا ہوتے ہیں، اس کا ﺳﺒﺐ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮐﺎ ﺍﺧﺮﺍﺝ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﻮﻧﺎ ہے ﺍﻭﺭ ﻧﺘﯿﺠﺘﺎً ﮨﮉﯾﺎﮞ ﺑﮭﺮﺑﮭﺮﯼ ﺍﻭﺭ ﺧﺴﺘﮧ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ، ﭼﯿﻨﯽ ﺳﮯ ﻟﺒﺮﯾﺰ ﺳﻮﮈﺍ ﻭﺍﭨﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻔﯿﻦ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ، ﺟﻮ ﻣﺴﺌﻠﮧ مزید ﺳﻨﮕﯿﻦ ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ، ﺳﻮﮈﺍ ﻣﺸﺮﻭﺑﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﻓﺎﺳﻔﻮﺭﺱ ﺍﯾﺴﮉ ﺑﮭﯽ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﯿﻠﺸﯿﺌﻢ ﮐﮯ ﺍﻧﺠﺬﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﻣﺪﺍﺧﻠﺖ ﮐﺮﺗﺎ ہے