ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺟﺴﻢ ﺍﯾﮏ ﻣﺸﯿﻦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺍﯾﻨﺪﮬﻦ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﭼﮑﻨﺎﺋﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺟﺴﻢ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﻨﺪﮬﻦ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺷﺮﻁ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﭼﮑﻨﺎﺋﯽ ﺻﺤﺖ ﺑﺨﺶ ﮨﻮ، ﺟﯿﺴﮯ ﻣﯿﻮﻭﮞ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﺷﺪﮦ ﺗﯿﻞ، ﺯﯾﺘﻮﻥ اور ﺳﺮﺳﻮﮞ کا تیل اور ﺳﻦ ﻓﻼﻭﺭ ﺁﺋﻞ، وغیرہ

ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﻗﺪﺭﺗﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺑﻨﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﭼﮑﻨﺎﺋﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺟﺴﻢ کے بہت سے افعال میں مددگار ہے، ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ جسم کے خلیوں ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭﯾﮟ اور کئی قسم کے ﮨﺎﺭﻣﻮﻧﺰ بننے میں کام آتا ہے، یہ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﻗﻮﺕ ﻣﺪﺍﻓﻌﺖ ﺑﺤﺎﻝ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﺩﻣﺎﻍ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻣﺘﺤﺮﮎ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ

لیکن ﺻﺮﻑ ﭘﯿﭧ ﺑﮭﺮ ﮐﺮ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮨﯽ ﻏﺬﺍﺋﯿﺖ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﻧﮩﯿﮟ، ﮨﻢ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ اکثر ﻟﻮﮒ ﻣﺮﻏﻦ ﻏﺬﺍﺋﯿﮟ ﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺏ ﻭﮦ ﺻﺤﺖ ﻣﻨﺪ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﯾﺴﯽ ﻏﺬﺍﺋﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺍﻭﺭ ﻭﺯﻥ ﺑﮍﮬﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﺑﮭﯽ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﯿﮟ، ہم ﺑﮩﺖ ﺳﯽ ﻋﺎﺩﺗﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﮐﮭﺎﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﺮﮨﯿﺰ ﮐﺮ کے آسانی کے ساتھ جسم میں کولیسٹرول لیول مناسب سطح پر رکھ سکتے ہیں

ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﮔﻮﺷﺖ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﭼﮑﻨﺎﺋﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺑﮍﮬﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﺎ ﻭﮦ ﺣﺼﮧ ﺟﻦ ﭘﺮ ﭼﮑﻨﺎﺋﯽ زیادہ ﮨﻮ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ نہ کریں

ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﯿﻞ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﺷﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﭽﮭﻠﯽ نہ پکائیں

ﻓﺮﻭﺯﻥ ﻓﻮﮈ ﺍﻭﺭ ﮈﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﮏ ﮐﮭﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ایسا فیٹ موجود ہوتا ہے ﺟﻮ ﺻﺤﺖ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ انتہائی ﻧﻘﺼﺎﻥ ﺩﮦ ﮨﮯ، ایسے کھانوں سے پرہیز کریں

ﻣﮑﮭﻦ، ﺑﺮﮔﺮ، ساسیج، ﮐﻮﮐﻮﻧﭧ ﺁﺋﻞ، ﻣﯿﭩﮭﯽ ﺍﺷﯿﺎﺀ اور ﺑﮭﻮﺳﯽ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺁﭨﺎ ﺍﻧﺴﻮﻟﯿﻦ اور ﻓﯿﭧ ﮐﻮ ﺑﮍﮬﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﺁﻟﻮ ﮐﮯ ﭼﭙﺲ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺯﺍﺭ ﮐﯽ ﺗﻠﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﺷﯿﺎﺀ ‏ﭘﮑﻮﮌﮮ ﺍﻭﺭ ﺳﻤﻮﺳﮯ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﺮﮨﯿﺰ کریں

ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﻮ ﮐﻔﺎﯾﺖ ﺷﻌﺎﺭﯼ ﺳﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﺟﮕﺮ ،ﮔﺮﺩﮮ ﺍﻭﺭ ﻣﻐﺰ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ سے ﺑﮭﺮﭘﻮﺭ ہوتے ﮨﮯ، انہیں مت کھائیں

ﮨﻔﺘﮯ ﻣﯿﮟ تین ﭼﺎﺭ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﻧﮉﮮ ﮐﯽ ﺯﺭﺩﯼ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎل مت کریں

ﺍﺳﻨﯿﮑﺲ ﺳﮯ ﭘﯿﭧ نہ بڑھیں

ﺳﮕﺮﯾﭧ ﻧﻮﺷﯽ کولیسٹرول اور بلڈ پریشر دونوں کو بڑھانے ﺍﻭﺭ پھیپھڑوں ﮐﮯ ﮐﯿﻨﺴﺮ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ بنتی ﮨﮯ

ناشتے ﺍﻭﺭ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ تلی ہوئی اشیاء، ﻣﯿﭩﮭﮯ ﻣﺸﺮﻭﺑﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﭨﮭﻨﮉﮮ ﭘﺎﻧﯽ ﭘﯿﻨﮯ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﮐﻮ ﺗﺮﮎ کریں

ﭼﮑﻨﺎﺋﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺩﻝ کی صحت کے لئے انتہائی خطرناک ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺑﻌﺾ ﺩﻓﻌﮧ ﺟﺎﻥ ﻟﯿﻮﺍ ثابت ﮨﻮ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﭼﮑﻨﯽ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﮐﮭﺎ ﮐﺮ آرام کرنے کی بجائے زیادہ سے زیادہ کام کریں

ﻧﻤﮏ ﮐﯽ ﺯﯾﺎﺩﺗﯽ ﺩﻝ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﺩﮦ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺗﯽ ہے اور ﻣﻌﺪﮮ ﮐﮯ ﮐﯿﻨﺴﺮ ﮐﺎ سبب ﺑﮭﯽ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻧﻤﮏ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﺍﻋﺘﺪﺍﻝ ﺳﮯ کریں

ﻣﺎﯾﻮﻧﯿﺰ ﺍﻭﺭ ﻣﮑﮭﻦ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮉﻭﭼﺰ ﮐﺜﺮﺕ ﺳﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ مت کریں

ﺍﯾﺴﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺟﻦ ﮐﮯ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﺌﯽ افراد ﺩﻝ ﮐﮯ ﻋﺎﺭﺿﮧ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮨﻮﮞ انہیں ﺍﭘﻨﺎ ﻣﮑﻤﻞ ﭼﯿﮏ ﺍﭖ اور ﺧﺎﺹ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﻟﯿﻮﻝ ﭼﯿﮏ ﮐﺮﺍﺗﮯ ﺭﮨﻨﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ

ﺩﻭﺩﮪ ﺍﻭﺭ ﺩﮨﯽ ﮐﯽ ﻣﻼﺋﯽ سے ﭘﺮﮨﯿﺰ کریں

ﺑﯿﮑﺮﯼ ﭘﺮﻭﮈﮐﭩﺲ یعنی، ﺑﺴﮑﭩﺲ ﭘﯿﭩﯿﺰ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﮏ وغیرہ ﻣﯿﮟ ﻣﮑﮭﻦ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻧﺎﺷﺘﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﻨﯿﮑﺲ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﻢ ﺳﮯ ﮐﻢ کریں

ﮈﯾﭗ ﻓﺮﺍﺋﯽ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﮔﺮﻟﻨﮓ، بار بی ﮐﯿﻮ ﺍﻭﺭ ﺷﯿﻠﻮ ﻓﺮﺍﺋﯽ ﮐﮭﺎﻧﺎ بنائیں ﺍﻭﺭ ﻧﺎﻥ ﺍﺳﭩﮏ ﺑﺮﺗﻦ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ کریں

ﺑﻨﺎﺳﭙﺘﯽ ﮔﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺭﺟﺮﯾﻦ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ بالکل بند کر دیں